Home / نظم

نظم

تیری ہنسی

ذرا جو آنکھیں بند کروں تو دکھائی دیتی ہے تیری صورت سنائی دیتی ہے تیری ہنسی ہوا کے دوش پر جھومتی سرمست لہر کے جیسی یخ بستہ برفیلے موسموں میں دوپہر کے جیسی صحرائے نفرت سے اُدھر محبت کے شہر کے جیسی تیری ہنسی شبِ ظلمت کی سحر کے جیسی …

Read More »

رات

یوں لگتا ہے رات اک پڑاو ہے اور صبح سفر کا پہلا پہر دن چڑے قافلوں کے قافلے اور پھر ایک اک کر کہ گھٹ رہے لوگ اپنی اپنی دشاوں میں بٹ رہے شام کے سائے پھر گہرے ہوتے ہیں اور میرے ساتھ فقط دو چار لوگ بچتے ہیں پھر …

Read More »

۸ مارچ، عورتوں کا عالمی دن

آج کے دن آؤ پوچھیں ان سے عورت گر جمہور ہے لوگو پھر کیوں اتنی دور ہے لوگو ہر سند سے ہر ڈگری سے ہر کاروبار اور نوکری سے ہر بیلٹ سے ہر کرسی سے اور فیصلے کی ہر شکتی سے آج کے دن آؤ کہہ دیں ان سے عورت …

Read More »

قاتلوں کے مداحو سنو

قاتلوں کے مداحو سنو رہزنوں کے رہنماو سنو تبلیغ تشدد کی کر کے تم نقشِ ابلیس پے چلے ہو ترویج نفرت کی کر کے تم معیارِ انساں سے گر گئے ہو تشدد سے کوئی سدھار آتا نہیں نفرت انسانوں کو دور کرتی ہے قتل سے کوئی سوچ مرتی نہیں یہ …

Read More »