Home / عمومی / ہجر میں مرے یا وصل میں جیے

ہجر میں مرے یا وصل میں جیے

ہجر میں مرے یا وصل میں جیے
ہمی لوگ تھے جواصل میں جیے

کسی نے کہا تھا مرتے دم تک جیو
تیرے پہلو کی طرح مقتل میں جیے

مشکلیں پڑیں کبھی نہ آساں ہونے کو
ہم زندہ دل ایسے ہر مشکل میں جیے

تمھارے شہر کا ہر وہ شخص میرا ہے
میرے بعد جو میری شکل میں جیے

اور اب زندگی کی تعریف بدل دو
زندہ وہ ہے جو ہر ایک پل میں جیے

عمران خوشحال

Check Also

نہ چاہو مجھے جاں سے زیادہ تم

نہ چاہو مجھے جاں سے زیادہ تم پر کرو تو ساتھ چلنے کا ارادہ تم …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے